Prime Minister Imran Khan’s telephone conversation with the people

Prime Minister Imran Khan's telephone conversation with the people

This latest short video clips / Vlog on ” Capital TV “ full hd episode.Today’s video clips / Vlog Topic: ” Prime Minister Imran Khan’s telephone conversation with the people “ this is different form yesterday topic.

#PMIK #آپکا_وزیراعظم_آپکے_ساتھ⁩ #PmImranKhan
وزیراعظم عمران خان کی ٹیلی فون پر عوام سے بات چیت

لائیو | وزیراعظم عمران خان کی ٹیلی فون پر عوام سے بات چیت، رابطے کے لئے ٹیلی فون نمبر 0519210809

وزیراعظم عمران خان آج براہ راست عوام کی ٹیلی فون کالز خود سنیں گے، وزیر اعظم عمران خان شام چار بجےوزیراعظم عمران خان نے عوام سے براہ راست رابطے کے سلسلے میں اعلان کردہ ’آپ کا وزیراعظم آپ کے ساتھ‘ پروگرام میں عوام کے سوالوں کا جواب دیتے ہوئے کہا کہ کورونا ویکسین لگانے کے لیے امیر یا غریب کا فرق نہیں کیا جائے گا بلکہ ایک طریقہ کار کے تحت لگائی جائے گی۔

وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ کورونا ویکسین کے حوالے سے سب سے پہلے ہماری کوشش ہے کہ صف اول کے طبی عملے کو لگائی جائے اس کے بعد طریقہ کار کے تحت 60 سال سے زائد عمر یا ایسی بیماری کا شکار جن کو کورونا سے مشکل پیدا ہوسکتی ہے ان کی باری آئے گی۔

انہوں نے کہا کہ فکر نہ کریں اس میں امیر غریب نہیں دیکھا جائے بلکہ طریقہ کار دیکھا جائے گا کہ کس کو پہلے لگنی چاہیے اور کوشش کریں گے زیادہ تر لوگوں کو اس سال میں کور کر سکیں۔

ریاست مدینہ سے متعلق سوال پر انہوں نے کہا کہ مدینہ کی ریاست کی کوششیں پوری ہونے کی خدشات ظاہر کی جاتی ہیں لیکن میں نے سب سے زیادہ مشکلات اور آزمائشوں کا سامنا کیا ہے اور کامیابی ملی اور جب اللہ نے انسان کو اشرف المخلوقات بنایا اور وہ طاقت دی ہے جو فرشتوں میں بھی نہیں ہے۔

انہوں نے کہا کہ آج نے دنیا میں جس نے بھی بڑا کام کیا اس کو دنیا نے کہا یہ نہیں ہوسکتا، جب پہلا آدمی دنیا کے سب سے اونچے پہاڑ ماؤنٹ ایورسٹ پر چڑھا تو اس سے پہلے کوئی مر گیا تھا یا ناکام ہوا تھا تو لوگوں نے اس سے کہا کہ تم نہ کرو، یہ دیوانہ ہے کہ کوشش کر رہا ہے اور میں نے فیصلہ کیا کہ مدینہ کی ریاست کے اصولوں پر ایک عظیم قوم بنے گی تو دوسرا راستہ نہیں ہے۔

عمران خان نے کہا کہ مدینے کی ریاست جدید ریاست تھی، پہلی دفعہ اس طرح کے تصورات، جمہوری معاشرہ آیا اور قانون کی بالادستی آئی، جب نبی ﷺ نے کہا کہ میری بیٹی بھی قانون توڑے گی تو اس کو بھی سزا ملے گی، کوئی قانون سے اوپر نہیں تھا پھر ایک انسانیت کا نظام تھا جس کو فلاحی ریاست کہتے ہیں، ریاست نے کمزور طبقے کی ذمہ داری لی تھی، میرٹ تھا، انسانی حقوق، مذہب اور ہر رنگ قانون کے سامنے برابر تھا۔

ان کا کہنا تھا کہ نبی ﷺ کا آخری خطبہ انسانی حقوق اور آج اقوام متحدہ کا چارٹر ہے وہ انہوں نے 1500 سال پہلے انسانیت کا چارٹر دیا اور یہ جدید تصورات تھے، جو مسلمان ملک ان اصولوں پر گئے وہ آگے بڑھے اور جو مسلمان ملک نہیں بھی ہے جب ان اصولوں کو اپناتا ہے تو اوپر چلا جاتا ہے اور جو ان سے پیچھے ہٹتا ہے تو وہی ہوتا ہے جو آج ہمارے حالات ہیں۔

انہوں نے کہا کہ مدینہ کی ریاست ایک جدوجہد کا نام ہے، ساری قوم مل کر محنت کرتی ہے، قربانیاں دیتی ہے اور ان شااللہ پاکستانی ایک عظیم قوم بننے جا رہے ہیں۔

After watch this short video clips/Vlog please share your thoughts here about the latest fresh watching on YouTube daily motion video.
Please share your comment here about the today fresh episode.

Add comment

Enable referrer and click cookie to search for plugintheme