Latest Posts

Molvi Abdul Aziz Demands Govt To Start Jehad e Kashmir & Impose Sharia Law in Country

Molvi Abdul Aziz Demands Govt To Start Jehad e Kashmir & Impose Sharia Law in Country
Molvi Abdul Aziz Demands Govt To Start Jehad e Kashmir & Impose Sharia Law in Country

لال مسجد اسلام آباد: مولانا عبدالعزیز کی بیدخلی کے لیے مسجد کے باہر سکیورٹی تعینات

دارالحکومت اسلام آباد میں محکمۂ اوقاف کے زیرِ انتظام لال مسجد پر ایک مرتبہ پھر مسجد کے سابق خطیب مولانا عبدالعزیز نے قبضہ کر لیا ہے اور موجودہ حکومت سے جہاد کشمیر شروع کرنے اور شریعت کے نافذ کا مطالبہ کیا ہے۔

مولانا عبدالعزیز جو اس مسجد کے خطیب بھی رہ چکے ہیں ان کی طرف سے تین مطالبات کیے گئے ہیں جن میں مسجد سے متصل سرکاری زمین پر بنائے گئے مدرسے کو بھی از سر نو تعمیر کرنے کا مطالبہ بھی شامل ہے۔ یاد رہے کہ حکومت نے یہ مدرسہ فوجی آپریشن کے دوران یہ کہہ کر مسمار کر دیا تھا کہ یہ سرکاری زمین پر غیر قانونی طور پر تعمیر کیا گیا ہے۔

بی بی سی سے بات کرتے ہوئے مولانا عبدالعزیز نے کہا ہے کہ وہ اپنے ان تین مطالبات کے پورے ہونے تک انتظامیہ یا حکومت کے خلاف جدوجہد جاری رکھیں گے۔

ان کا کہنا ہے کہ اس مسجد کے لیے ان کے والد اور بھائی نے قربانیاں دی ہیں اور حکومت ان کو یہاں سے بے دخل نہیں کر سکتی۔ ان کا کہنا ہے کہ کچھ اور ایسی مساجد ہیں جہاں خطیب ریٹائرڈ ہوئے مگر اس کے باوجود نئے خطیب تعینات نہیں کیے گئے تو ایسے میں انھیں زبردستی ہٹا کر لال مسجد میں نئے خطیب کی تقرری میں اتنی عجلت کیوں برتی گئی ہے۔

مولانا عبدالعزیز نے گذشتہ جمعے کا خطبہ دیا اور اپنے مطالبات دہرائے۔ ان سے مسجد کا قبضہ واپس لینے کے لیے انتظامیہ نے ان سے مذاکرات شروع کیے تاہم ابھی تک تعطل کی صورت حال برقرار ہے۔

تھانہ آبپارہ کے پولیس اہلکاروں کا کہنا ہے کہ وہ دو دن سے لال مسجد کے اردگرد سکیورٹی پر مامور ہیں۔

مولانا عبدالعزیز کا کہنا ہے کہ بعض اوقات پولیس ان کے لیے کھانا لے کر آنے والوں کو بھی روک لیتی ہے، تاہم پولیس نے اس کی تردید کی ہے۔ ایک سوال کے جواب میں مولانا عبدالعزیز نے کہا کہ یہ تنازع انھیں خطابت سے ہٹانے کے بعد شروع ہوا۔ ان کے مطابق اس مسجد کا نظم و نسق ان سے بہتر کوئی نہیں چلا سکتا۔

یاد رہے کہ اس سے قبل بھی مولانا عبدالعزیز اور انتظامیہ کے درمیان مختلف مواقع پر مذاکرات ہوتے رہے ہیں۔

بی بی سی کے رابطہ کرنے پر ڈپٹی کمشنر اسلام آباد حمزہ شفقات نے لال مسجد تنازع پر کوئی تبصرہ نہیں کیا ہے۔

اسلام آباد کے سیکٹر جی سیون میں خواتین کے مدرسے موجود ہیں جہاں پر طالبات کی تعداد تین ہزار سے زیادہ ہے۔

سابق فوجی صدر پرویز مشرف کے دور میں سنہ2007 میں لال مسجد میں فوجی آپریشن کے دوران مبینہ طور پر ایک سو سے زیادہ افراد ہلاک ہوگئے تھے جن میں لال مسجد کی سابق انتظامیہ کے بقول خواتین بھی شامل تھیں۔ تاہم ضلعی انتظامیہ اس دعوے کی تردید کرتی ہے۔ مولانا عبدالعزیر اس آپریشن میں خواتین کا برقعہ اوڑھ کر فرار ہو گئے تھے، جبکہ ان کی والدہ اور بھائی اس آپریشن میں ہلاک ہو گئے تھے۔

چار سال قبل مولانا عبدالعزیز نے دو مختلف مقدمات سے ضمانت ملنے کے بعد سنہ 2016 میں سابق فوجی صدر پرویز مشرف سمیت لال مسجد آپریشن کے تمام کرداروں کو معاف کرنے سے متعلق بیان دیا تھا۔

عدالت میں پیشی کے بعد میڈیا کے نمنائندوں سے بات کرتے ہوئے مولانا عبدالعزیز کا کہنا تھا کہ وہ سنہ 2007 میں لال مسجد اور جامعہ حفصہ کے خلاف فوجی آپریشن کرنے والے سابق فوجی صدر پرویز مشرف سمیت دیگر تمام کرداروں کو معاف کرنے کو تیار ہیں۔

جن دو مقدمات میں ان کی عبوری ضمانت منظور کی گئی ان میں سول سوسائٹی کے کارکن کو دھمکیاں دینے کے علاوہ مذہبی منافرت اور حکومت کے خلاف شرانگیز تقاریر کرنے کے مقدمات شامل تھے۔

تھانہ آبپارہ کے انچارج نے عدالت میں رپورٹ جمع کروائی ہے جس میں کہا گیا ہے کہ ان دونوں مقدمات میں مولانا عبدالعزیز کو گرفتار نہیں کیا گیا۔ پولیس افسر نے عدالت کو بتایا کہ ان مقدمات میں اگر اُنہیں گرفتار کیا جاتا تو اس سے وفاقی دارالحکومت میں امن عامہ کو شدید خطرہ لاحق ہو جاتا

Lal Masjid Islamabad: Security deployed outside mosque to evacuate Maulana Abdul Aziz

In the capital, Islamabad, Lal Masjid is once again occupied by the former mosque’s Maulana Abdul Aziz and demanded from the present government to start Jihad Kashmir and enforce Sharia.
Three demands have been made by Maulana Abdul Aziz, who is also the addressee of the mosque, including the demand for the reconstruction of the madrassa on the official land adjoining the mosque. It should be remembered that the government demolished the madrassa during military operations, saying that it was illegally built on public land.
Talking to the BBC, Maulana Abdul Aziz has said that he will continue to struggle against the administration or the government till all three of his demands are met.
He says his father and brother have sacrificed for this mosque and the government cannot evict them here. He says there are some other mosques where the khateeb has retired but the new khateeb has not been posted yet.
Maulana Abdul Aziz delivered a speech last Friday and repeated his demands. The administration started talks with them to withdraw the mosque from them, but the situation is still pending.

Police officers at Apara police station say they have been conducting security around Lal Masjid for two days.
Maulana Abdul Aziz says that at times the police also stop those who bring food for him, but police have denied it. Responding to a question, Maulana Abdul Aziz said the controversy began after he was removed from his address. According to him, the administration of this mosque can run no better than them.
It should be remembered that even before this there has been talks between Maulana Abdul Aziz and the administration on various occasions.

On contacting the BBC, Deputy Commissioner Islamabad Hamza Shafqat has not commented on the Lal Masjid dispute.

There are women madrassas in Sector G-7, Islamabad, where the number of girls is more than 3,000.
During the military operation in Lal Masjid in 2007 under former military president Pervez Musharraf, more than a hundred people were killed, including women under the former administration of Lal Masjid. The district administration, however, denies this claim. Maulana Abdul Azir escaped unhurt in the operation, while his mother and brother participated in the operation.
Four years ago, Maulana Abdul Aziz made a statement in 2016 that he had waived all the roles of the Lal Masjid operation, including former military president Pervez Musharraf, after being granted bail in two different cases.
Speaking to media representatives after appearing in court, Maulana Abdul Aziz said he was ready to pardon all other roles, including former military president Pervez Musharraf, who launched a military operation against the Lal Masjid and Jamia Hafsa in 2007.
The two cases in which his interim bail was granted included threats to civil society activists, as well as cases of blasphemy against religious hatred and government.
Aabpara police station has filed a report in the court stating that Maulana Abdul Aziz has not been arrested in these two cases. The police officer told the court that if they were arrested in these cases, it would pose a serious threat to public peace in the federal capital.

May you Like This !

CCTV Video Of 18 Year Old Boy In The Cage of Lions In Safari Park Lahore

faso

Syed Ali Haider Ney Faisla Kun Marhala ki Khabar Suna di – Khabar Gaam

faso

Why Pakistanis are celebrating 26 and 27 February?

faso

Police Didn’t Provide Injured Muslims Ambulance And Let Them Die – Indian Doctor Reveals

faso

Imran Khan Listening Milli Naghma in Rahat Fateh Ali Khan’s Voice

faso

Safari Park Lion Attack, See Victim Pictures, Victim’s Family Protest Outside Safari Park

faso

Leave a Comment