Press "Enter" to skip to content

Facebook Suspends An Organized Network of Pakistani Accounts & Pages

Facebook suspends ‘organized network’ of Pakistani accounts and web pages

Facebook, the world’s largest social networking site, has announced that it has launched a ‘network’ of 103 web pages, 78 groups, 453 individual accounts and 107 Instagram accounts from Pakistan on its platform. Has been suspended for involvement in suspicious activities.
According to Facebook, they investigated the suspicious accounts and found that they were “organized and uncertified”.
Facebook has published its report entitled ‘Coordinated in Authentic Behavior’, a report that identifies accounts that are being run in a highly organized manner and trying to divert public attention. Are
Facebook provided information about these accounts and pages to the Internet Observatory Group (SIO) at Stanford University in the United States.
The group’s research found that the most important common denominator was that the suspended accounts violated Facebook’s policies by systematically reporting large-scale accounts to Pakistan, Islamabad. , Used to publish material against the Pakistani government and the Pakistani army.
The SIO’s investigation also revealed that the suspended accounts also reported for the suspension of accounts linked to the Ahmadi community, and that the content on the network’s pages and accounts was published by the Pakistani military, Pakistani intelligence. The ISI and the ruling Pakistan Tehreek-e-Insaf (PTI) were full of praise.
Last year, Facebook suspended more than 100 Pakistani-linked accounts, which the company said were also found to be “organized and uncertified”. “These pages and accounts have been linked to ISPR personnel from the Pakistan Army’s public relations department.”
Systematic large-scale reporting
The SIO’s investigation revealed that the network of suspended pages and accounts was reporting on Facebook “largely highly organized” complaints and accounts that were “anti-Islamic”. And Pakistan was against it.
Shelby Grossman, lead researcher and author of a study by the Stanford Internet Observatory (SIO), told the BBC that the most important finding in the study was the network’s “rapidity”. And qualifications’ who have reported accounts so systematically.
List of suspended pages and their number of members


The study found that trolling pages, such as the Voice of Islam page, persuaded users to report as many accounts as possible and told users how to do so.
According to the SIO, the network has seen claims that Facebook suspended more than 200 accounts following its complaint. However, it could not be confirmed whether the network’s complaints were the cause of Facebook’s actions against the more than 200 accounts.
The SIO also stated in its research that the network was also using an automated method of filing complaints so that it could be used to report and report a large number of pages and groups. ۔
According to the SIO, the user who created this method called ‘Auto Reporter’ has regularly written that the purpose of creating this method is to report ‘accounts that are anti-Islamic, anti-Pakistan and dangerous’. Can be due.
At the same time, the network developed and published training materials that help users learn how to report as many accounts as possible.
Shelby Grossman told the BBC: “The network has created videos of training materials on YouTube to tell users how to report accounts. I don’t think the methods to speed up the process have been tried before. ”

Common Value in Network: ‘Pakistani Government and Pakistan Army Content’
The SIO noted in its research that the common denominator in the entire network suspended by Facebook was that “all its pages and accounts contained nationalist content and in particular the Pakistani military.” And the ISI was praised.

A page suspended by Facebook


Apart from this, the second thing that came to light was that the accounts of the IK were clearly supporting the ruling party PTI and opposing the PML-N.
When Shelby Grossman was asked if his team tried to find out who was behind the network, he said he did not know, but his own guess was that the content “Research has shown that it was not up to standard with the accounts suspended last year for ISPR-linked accounts.”
The SIO study said that “the accounts included in this network were also seen publishing anti-India material and posting in support of the Khalistan movement.”

READ  Advice to PTI's Fazlur Rehman Avoid otherwise be prepared for the results

“We also saw that the network was publishing material against the Bharatiya Janata Party, Indian Prime Minister Narendra Modi, the Indian Army.”
The SIO wrote in its research that they could not use the information provided by Facebook to find out who the people running the network are and to whom they are connected.
However, the authors of SIO write, “We saw in a post published on this network that one of their colleagues had died and paid tribute to him by saying that he was very hardworking. , Was patriotic and worked diligently against opponents and was associated with agencies. However, it also appears that the content published from this network is past

The network was also using an automated method of filing complaints called ‘Auto Reporter’

Shelby Grossman added that the research suggests that social networking sites should re-evaluate the complaint system because it is more difficult to check the content and such networks add to the difficulties. Are
She added that her team would not work on it further but hoped that Pakistani researchers and journalists would work on it further with the help of the material included in the SIO report.

“Some of the accounts created in Pakistan present themselves as Indian accounts.”
When the BBC contacted Facebook about the report, they said that their own research had revealed that the entire network was being run from Pakistan, but that some of the accounts had Indian identities. Offer as

Many accounts in this network also published content in support of Khalistan

Asked why the research was limited to a few countries, Facebook said its team was constantly trying to identify “systematic unverified behavior” on its platform and that these efforts Not limited to any one country or region.
Asked about Facebook’s complaints system, the platform said it was working to improve its system and would test the content monitoring system with an independent body from next year. Review Facebook research independently.
Facebook acknowledges that it does its best to investigate complaints before taking action, but errors occur and that is why it is constantly trying to improve the system.
Facebook told the BBC that it scrutinizes every report it receives and that if it receives a single complaint or multiple complaints about an account or page, it does not affect its procedures.
It should be noted that the report released by Facebook reviewed the networks established in the United States and Russia besides Pakistan and then a total of 521 accounts on Facebook, 137 Facebook pages, 78 groups and 72 Insta. Gram accounts suspended.

فیس بک کی جانب سے پاکستانی اکاؤنٹس اور ویب پیجز کا ایک ’منظم نیٹ ورک‘ معطل

دنیا میں سماجی رابطوں کی سب سے بڑی ویب سائٹ فیس بک نے اعلان کیا ہے کہ اس نے اپنے پلیٹ فارم پر پاکستان سے تعلق رکھنے والے 103 ویب پیجز، 78 گروپس، 453 انفرادی اکاؤنٹس اور 107 انسٹا گرام اکاؤنٹس پر مشتمل ایک ایسے ‘نیٹ ورک’ کو معطل کر دیا ہے جو مشتبہ سرگرمیوں میں ملوث تھا۔

فیس بک کے مطابق انہوں نے ان مشتبہ اکاؤنٹس کی چھان بین کی تو انہیں معلوم ہوا کہ یہ اکاؤنٹس ’منظم اور غیر مصدقہ رویے‘ کے مرتکب ہوئے ہیں۔

فیس بک نے اپنی اس رپورٹ کو ’کووآرڈینیٹڈ ان اتھینٹک بیہیوئر‘ کے عنوان سے شائع کیا ہے یعنی ایک ایسی رپورٹ جو ان اکاؤنٹس کی نشاندھی کرتی ہے جو بڑے منظم طریقے سے چلائے جا رہے ہیں اور عوامی بحث و مباحثے کا رخ موڑنے کی کوشش کرتے ہیں۔

READ  Listen what train driver has to say about accident | GNN | 31 Oct 2019

فیس بک نے ان اکاؤنٹس اور صفحات سے متعلق معلومات امریکہ کی سٹینفورڈ یونیورسٹی کے انٹرنیٹ آبزرویٹری گروپ (ایس آئی او) کو فراہم کیں تھیں۔

اس گروپ کی جانب سے کی گئی تحقیق میں سب سے اہم قدر مشترک یہ سامنے آئی کہ معطل کیے جانے والے اکاؤنٹس فیس بک کی پالیسیوں کی خلاف ورزی کرتے ہوئے ‘منظم طریقے سے بڑے پیمانے پر ایسے اکاؤنٹس کو رپورٹ کر رہے تھے جو پاکستان، اسلام، پاکستانی حکومت اور پاکستانی فوج کے خلاف مواد شائع کرتے تھے۔’

ایس آئی او کی جانب سے کی گئی تحقیق سے یہ بھی سامنے آیا ہے کہ معطل کیے جانے والے اکاؤنٹس احمدی برادری سے منسلک اکاؤنٹس کو بھی معطل کرنے کے لیے رپورٹ کرتے اور اس نیٹ ورک کے پیجز اور اکاؤنٹس پر شائع مواد پاکستانی فوج، پاکستانی خفیہ ایجنسی آئی ایس آئی اور حکومتی جماعت پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کی تعریف سے بھرے ہوئے تھے۔

واضح رہے کہ گذشتہ سال بھی فیس بک نے پاکستان سے تعلق رکھنے والے 100 سے زیادہ ایسے اکاؤنٹس معطل کیے تھے جن کے بارے میں کمپنی کا کہنا تھا وہ بھی ’منظم اور غیر مصدقہ رویے‘ کے مرتکب پائے گئے تھے اور الزام عائد کیا تھا کہ ’ان صفحات اور اکاؤنٹس کا تعلق پاکستانی فوج کے تعلقات عامہ کے شعبے آئی ایس پی آر کے اہلکاروں سے پایا گیا ہے۔‘

منظم طریقے سے بڑے پیمانے پر رپورٹنگ
ایس آئی او کی تحقیق سے یہ بات سامنے آئی کہ معطل کیے جانے والے صفحات اور اکاؤنٹس کا نیٹ ورک فیس بک پر ’بڑے پیمانے پر انتہائی منظم طریقے‘ سے ایسے اکاؤنٹس اور پیجز کی شکایت کرتے ہوئے انھیں رپورٹ کر رہا تھا ’جو اسلام مخالف اور پاکستان مخالف تھے‘۔

سٹینفورڈ انٹرنیٹ آبزرویٹری (ایس آئی او) کی جانب سے کی گئی تحقیق کی مرکزی محقق اور مصنف، شیلبی گروسمین نے بی بی سی سے بات کرتے ہوئے کہا کہ اس تحقیق میں جو سب سے اہم بات سامنے آئی ہے وہ اس نیٹ ورک کی ’تیزی اور قابلیت‘ ہے جس نے اتنے منظم طریقے سے اکاؤنٹس کو رپورٹ کیا ہے۔

تحقیق میں بتایا گیا کہ ٹرولنگ کرنے والے صفحات، مثلاً ’وائس آف اسلام‘ نامی ایک پیج، صارفین کو قائل کرتا تھا کہ وہ کیسے زیادہ سے زیادہ اکاؤنٹس کو رپورٹ کریں اور صارفین کو ایسا کرنے کا طریقہ کار بھی بتایا جاتا تھا۔

ایس آئی او کے مطابق اس نیٹ ورک میں ایسے دعوے دیکھے گئے ہیں کہ اس کی شکایت کے بعد فیس بک نے دو سو سے زیادہ اکاؤنٹس معطل کیے۔ البتہ اس بات کی تصدیق نہیں ہو سکی کہ اس نیٹ ورک کی شکایات ہی فیس بک کی جانب سے ان دو سو سے زیادہ اکاؤنٹس کے خلاف لیے گئے اقدامات کی وجہ بنی تھیں یا نہیں۔

ایس آئی او نے اپنی تحقیق میں یہ بات بھی پیش کی کہ یہ نیٹ ورک شکایات درج کرنے کا ایک خودکار طریقہ بھی استعمال کر رہا تھا تاکہ اس کی مدد سے بڑے پیمانے پر کئی صفحات اور گروپس کی شکایت کی جائے اور انھیں رپورٹ کر دیا جائے۔

ایس آئی او کے مطابق ’آٹو رپورٹر‘ نامی یہ طریقہ کار بنانے والے صارف نے باقاعدہ طور پر یہ لکھا ہے کہ اس طریقہ کار کو بنانے کا مقصد ہی یہ ہے کہ ’اُن اکاؤنٹس کو رپورٹ کیا جائے جو اسلام مخالف، پاکستان مخالف اور خطرے کے باعث بن سکتے ہوں۔‘

ساتھ ساتھ اس نیٹ ورک نے تربیتی مواد بھی تیار کر کے شائع کیا جس کی مدد سے صارفین کو بتایا جاتا ہے کہ کس طرح سے وہ زیادہ سے زیادہ تعداد میں اکاؤنٹس کو رپورٹ کر سکیں۔

READ  Who benefits from killing Nawaz Sharif?

شیلبی گروسمین نے اس حوالے سے بی بی سی کو بتایا کہ ’اس نیٹ ورک نے یو ٹیوب پر تربیتی مواد کی ویڈیوز تیار کی ہیں تاکہ صارفین کو بتایا جا سکے کے کیسے اکاؤنٹس کو رپورٹ کیا جائے۔ میرے خیال میں اس عمل کو تیز رفتار بنانے کے طریقے پہلے نہیں آزمائے گئے۔‘

نیٹ ورک میں قدر مشترک: ’پاکستانی حکومت اور پاکستانی فوج سے متعلق مواد‘

ایس آئی او نے اپنی تحقیق میں ذکر کیا کہ فیس بک کی جانب سے معطل کیے جانے والے پورے نیٹ ورک میں قدر مشترک بات یہ تھی کہ ’اس میں شامل تمام صفحات اور اکاؤنٹس میں قوم پرست مواد کا پرچار کیا جاتا تھا اور بالخصوص پاکستانی فوج اور خفیہ ادارے آئی ایس آئی کی تعریف کی جاتی تھی۔‘

فیس بک کی جانب سے معطل کیے جانے والا ایک پیج

یہ نیٹ ورک ’آٹو رپورٹر‘ ناما شکایات درج کرنے کا ایک خودکار طریقہ بھی استعمال کر رہا تھا

شیلبی گروسمین نے مزید کہا کہ اس تحقیق سے معلوم ہوتا ہے کہ سماجی رابطوں کی ویب سائٹس کو شکایت درج کرانے کے نظام کا ازسر نو جائزہ لینا چاہیے کیونکہ مواد کی جانچ کرنا نہایت مشکل کام ہے اور اس قسم کی نیٹ ورک مشکلات میں مزید اضافہ کرتے ہیں۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ ان کی ٹیم اس پر مزید کام تو نہیں کرے گی لیکن وہ توقع کرتی ہیں کہ ایس آئی او کی رپورٹ میں شامل مواد کی مدد سے پاکستانی محققین اور صحافی اس پر مزید کام کریں گے۔

’پاکستان میں بنے چند اکاؤنٹس خود کو انڈین اکاؤنٹ بنا کر پیش کرتے ہیں‘
بی بی سی نے اس رپورٹ کے حوالے سے فیس بک سے رابطہ کیا تو ان کا کہنا تھا کہ ان کی اپنی تحقیق سے یہ بات سامنے آئی کہ یہ پورا نیٹ ورک پاکستان سے چلایا جا رہا ہے لیکن ان میں سے چند اکاؤنٹ اپنی شناخت انڈین کے طور پر پیش کرتے ہیں۔

اس نیٹ ورک میں کئی اکاؤنٹس خالصتان کی حمایت میں بھی مواد شائع کرتے تھے

اس سوال پر کہ یہ تحقیق صرف چند ملکوں تک محدود کیوں ہے، فیس بک کی جانب سے کہا گیا کہ ان کی ٹیم مسلسل اپنے پلیٹ فارم پر ’منظم طریقے سے غیر مصدقہ رویے‘ کی شناخت کرنے کی کوششیں کر رہی ہوتی ہے اور یہ کوششیں کسی ایک ملک یا خطے تک محدود نہیں ہیں۔

فیس بک پر شکایت درج کرانے کے نظام کے بارے میں سوال پر پلیٹ فارم کی جانب سے کہا گیا کہ وہ اپنے نظام کو بہتر بنانے کے لیے کوشاں ہیں اور اگلے سال سے مواد کی نگرانی کے نظام کی جانچ ایک خود مختار ادارے کو دیں گے جو فیس بک کی تحقیق کا آزادانہ جائزہ لے گا۔

فیس بک نے تسلیم کیا کہ وہ اپنی طرف سے پوری کوشش کرتے ہیں کہ درج شکایات پر اقدامات لینے سے قبل پوری جانچ کی جائے لیکن غلطیاں ہو جاتی ہیں اور اسی لیے وہ اس نظام کو مسلسل بہتر بنانے کی کوشش کر رہے ہیں۔

فیس بک نے بی بی سی کو بتایا کہ وہ درج کرائی گئی ہر رپورٹ کا بغور جائزہ لیتے ہیں اور کسی اکاؤنٹ یا پیج کے بارے میں ایک شکایت ملے یا متعدد شکایات ملیں، اس سے ان کا طریقہ کار متاثر نہیں ہوتا۔

واضح رہے کہ فیس بک کی جانب سے جاری کی گئی رپورٹ میں پاکستان کے علاوہ امریکہ اور روس میں قائم نیٹ ورکس کا جائزہ لیا گیا اور اس کے بعد مجموعی طور پر فیس بک پر 521 اکاؤنٹ، 137 فیس بک پیجز، 78 گروپس اور 72 انسٹا گرام اکاؤنٹس کو معطل کیا گیا۔

Source

Be First to Comment

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *