Afghan Women Will Not Be Allowed to Play Any Sport

Afghan Women Will Not Be Allowed to Play Any Sport

Women will not be allowed to play any sport, including cricket: Taliban

Ahmadullah Wasiq, deputy head of the Taliban’s cultural commission, said women would not be allowed to play any sport, including cricket, without covering their bodies and faces.

Talking to Australian media, the Taliban leader said that women’s participation in sports was neither appropriate nor necessary and would not violate Islamic values ​​due to the reaction of the opposition.

Ahmadullah Wasiq, deputy head of the Afghan Cultural Commission, said he did not think women should be allowed to play cricket because in cricket, women face a situation where their bodies and faces are not covered and it is Islamic. It is against the teachings.

The new Afghan government will be sworn in on the 20th anniversary of the 9/11 attacks
Who holds which position in the Taliban cabinet? The full list came up
In Kabul, the Taliban continued to protect women protesting against them
Ahmadullah Wasiq said that this is the age of media and everyone sees pictures and videos, the Islamic Emirate of Afghanistan will not allow women to play any sport in which the body of women is prominent.

It may be recalled that the Taliban had announced the interim government of Afghanistan two days ago in which Mullah Mohammad Hassan Akhund was appointed as the Prime Minister of Afghanistan while Mullah Abdul Ghani Baradar and Maulvi Abdul Salam Hanafi were appointed as the Deputy Prime Ministers.

The interim government announced by the Taliban did not include any women, which was a matter of concern to the European Union and other European countries.

خواتین کو کرکٹ سمیت جسم کی نمائش والے کسی کھیل کی اجازت نہیں دیں گے: طالبان

طالبان کے ثقافتی کمیشن کے نائب سربراہ احمداللہ واثق کا کہنا ہے کہ خواتین کو کرکٹ سمیت کسی بھی ایسے کھیل کی اجازت نہیں دیں گے جس میں ان کا جسم اور چہرہ ڈھکا ہوا نہ ہو۔

آسٹریلوی میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے طالبان رہنما کا کہنا تھا کہ خواتین کا کھیلوں میں حصہ لینا نہ تو مناسب ہے اور نہ ہی ضروری ہے، مخالفین کے ردعمل کی وجہ سے اسلامی اقدار کو پامال نہیں کریں گے۔

نائب سربراہ افغان ثقافتی کمیشن احمد اللہ واثق کا کہنا تھا ان کا نہیں خیال کہ خواتین کو کرکٹ کھیلنے کی اجازت دینی چاہیے کیونکہ کرکٹ میں خواتین کو ایسی صورت حال کا سامنا کرنا پڑتا ہے جہاں ان کا جسم اور چہرہ ڈھکا ہوا نہیں ہوتا اور یہ اسلامی تعلیمات کے خلاف ہے۔

نئی افغان حکومت نائن الیون کے 20 سال مکمل ہونے والے روز حلف اٹھائے گی
طالبان کی کابینہ میں کون کس عہدے پر فائز؟ مکمل فہرست سامنے آگئی
کابل میں طالبان اپنے ہی خلاف احتجاج کرنے والی خواتین کی حفاظت کرتے رہے
احمد اللہ واثق کا کہنا تھا یہ میڈیا کا دور ہے اور تمام لوگ تصاویر اور ویڈیوز دیکھتے ہیں، امارت اسلامی افغانستان خواتین کو کسی ایسے کھیل کی اجازت نہیں دے گی جس میں خواتین کا جسم نمایاں ہو۔

خیال رہے کہ طالبان نے دو روز قبل افغانستان کی عبوری حکومت کا اعلان کیا تھا جس میں ملا محمد حسن اخوند کو افغانستان کا وزیراعظم جبکہ ملا عبدالغنی برادر اور مولوی عبدالسلام حنفی کو نائب وزرائے اعظم مقرر کیا گیا تھا۔

طالبان کی جانب سے اعلان کردہ عبوری حکومت میں کوئی خاتون شامل نہیں تھی جس پر یورپی یونین اور دیگر یورپی ممالک نے تشویش کا اظہار کیا تھا۔

Add comment