Abuse Case: Mufti Aziz-ur-Rehman Pleads Guilty

Abuse case: Mufti Aziz-ur-Rehman pleads guilty

Lahore: The accused says that the management of the madrassa conspired against him. The police want to take a confessional statement by forcing him to do so.

According to details, the accused Aziz-ur-Rehman deviated from the confessional statement submitted by the police in the case of misconduct against a student of a madrassa in Lahore. Mufti Aziz-ur-Rehman has refused to confess.

According to GNN, the police produced the accused in court to record his confession under section 164. The accused refused to plead guilty in the courtroom.

Aziz-ur-Rehman said in the statement that the police wanted to take a confessional statement by forcing him to do so. The administration of the madrassa has conspired against me.

The accused testified before Judicial Magistrate Shahid Khokhar.

It should be noted that the accused Mufti Aziz-ur-Rehman is accused of abusing a student. A video of Mufti Aziz-ur-Rehman’s alleged abuse of a student came to light. After the video went viral on social media, the police had registered a case against Mufti Aziz-ur-Rehman.

Mufti Aziz-ur-Rehman was expelled from the madrassa after a student abuse incident. Meanwhile, Jamiat Ulema-e-Islam had also suspended the membership of Mufti Aziz after the video scandal came to light.

The whole Liberal Mafia is sitting quietly on the Dirty Marches

زیادتی کیس، مفتی عزیز الرحمان کا اعتراف جرم سے انکار

لاہور: ملزم کاکہناہے کہ اس کے خلاف مدرسے کی انتظامیہ نے ساز ش کی۔پولیس زبردستی دباؤ میں لا کر اعترافی بیان لینا چاہتی ہے۔

تفصیلات کے مطابق لاہور میں مدرسے کے طالبعلم سے بدفعلی کا کیس میں ملزم عزیز الرحمان پولیس کے جانب سے جمع کرائے گئے اعترافی بیان سے منحرف ہوگیا۔ مفتی عزیز الرحمان نے اعتراف جرم کرنے سے انکار کردیا ہے۔

جی این این کے مطابق ؎ پولیس نے ملزم کا 164 کے تحت اعترافی بیان ریکارڈ کرانے کےلیےعدالت پیش کیا ۔ملزم نے کمرہ عدالت میں اعتراف جرم کرنے انکار کردیا۔

عزیز الرحمان کا بیان میں کہنا ہے کہ پولیس زبردستی دباؤ میں لا کر اعترافی بیان لینا چاہتی ہے ۔ میرے خلاف مدرسے کی انتظامیہ نے سازش کی ہے ۔

جوڈیشل مجسٹریٹ شاہد کھوکھر کے روبرو ملزم نے بیان دیا۔

واضح رہے کہ ملزم مفتی عزیز الرحمان پر طالبعلم سے زیادتی کا الزام ہے ۔ مفتی عزیزالرحمان کی طالبعلم سے مبینہ زیادتی کی ویڈیو منظر عام پر آئی تھی ۔ویڈیو سوشل میڈیا پر وائرل ہونے کے بعد صدرپولیس نے مفتی عزیزالرحمان کے خلاف مقدمہ درج کیا تھا ۔

طالب علم سے زیادتی کے واقعہ کے بعد مفتی عزیز الرحمان کو مدرسے سے نکال دیا گیا تھا ۔ جبکہ ویڈیو سکینڈل منظر عام آنے پر جمعیت علما اسلام نے بھی مفتی عزیز کی رکنیت معطل کردی تھی ۔

Related articles